نماز عید کے بعد قبرستان کی زیارت کرنا کیسا ہے؟

شماررہ السنہ جہلم جواب: قبرستان کی زیارت مشروع اور جائز ہے ، لیکن اسے کسی دن کے ساتھ خاص کرنا ، جیسا کہ عید کے دن قبرستان جا کر دعا کرنا اور قبر پر پھول نچھاور کرنا وغیرہ قبیح بدعت اور فعل بد ہے ۔ خیر القرون کے مسلمان اس سے ناواقف تھے ۔ وہ سب سے بڑھ کر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت کرنے والے اور محبت رسول کے تقاضوں کو پورا کرنے والے تھے ۔ دین کا وسیع علم ہونے کے باوجود انہوں نے ایسا نہیں کیا ، تو یہ دین کیسے بن گیا ۔ امام مالک بن انس رحمہ اللہ (93-179ھ) کیا خوب فرماتے ہیں: من أحدث فى هذه الأمة اليوم شيئا لم يكن عليه سلفها فقد زعم أن رسول الله صلى الله عليه وسلم خان الرسالة لان الله تعالى يقول: ﴿اليوم أكملت لكم دينكم وأتممت عليكم…

Continue Readingنماز عید کے بعد قبرستان کی زیارت کرنا کیسا ہے؟

اعتکاف کے مسائل قرآن و سنت کی روشنی میں

تحریر: قاری اسامہ بن عبد السلام حفظہ اللہ اعتکاف کی تعریف اعتکاف کے معنی رکنے کے ہیں اور شرعی محاورہ میں دنیا کہ سارے کاروبار کو چھوڑ کر عبادت کی نیت سے اور رضا ئے مولی کی غرض سے مسجد میں ٹھہر کرعبادت کرنے کو اعتکاف کہتے ہیں سبل السلام (ج٢-٩٠٩) اعتکاف کے لئے نیت اعتکاف کے لئے نیت ضروری ھے لیکن نیت کے لئے (نویت سنۃ الاعتکاف) یا دیگر الفاظ بدعت ہیں نیت دل کا فعل ھے اعتکاف کی اہمیت اعتکاف کی اہمیت کا اندازہ اسی بات سے ہوجاتا ھے کہ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنی زندگی میں ہمیشہ اعتکاف کیا ہے جیسا کہ عبداللہ بن عمررضی اللہ عنہ کا بیان ھے أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: " كَانَ يَعْتَكِفُ الْعَشْرَ الْأَوَاخِرَ مِنْ رَمَضَانَ "، ترجمہ اللہ کےرسول صلی اللہ علیہ وسلم رمضان کے آخری عشرے کا…

Continue Readingاعتکاف کے مسائل قرآن و سنت کی روشنی میں

كيا نماز عید کو دوسرے دن کے لئے مؤخر کيا جا سكتا هے؟

سوال : کیا شوال کے چاند کی رویت ہو جانے کے بعد صلاۃ عید کو اس مقصد سے دوسرے دن کے لئے مؤخر کرنا جائز ہے کہ تمام مسلمان مزدور جو فیکٹریوں اور آفسوں میں کام کرتے ہیں وہ ذمہ داران سے عید کے دن کی چھٹی حاصل کر سکیں اور چونکہ ان کے یہاں پہلے سے عید کا دن معلوم نہیں ہے اس لئے ذمہ داران کو چھٹی کے خاص دن کے بارے میں خبر دینا ان کے لئے دشوار ترین امر ہے ؟ جواب : صلاۃ عیدین فرض کفایہ ہے۔ جب اس کو کافی تعداد میں لوگ ادا کر لیں تو باقی لوگوں سے گناہ ساقط ہو جائے گا۔ اور چونکہ عرب ممالک میں عموماً اور سعودی عرب میں خصوصاً چاند کی رویت ہونے کی بنا پر اسلامی مراکز صلاۃ عید کا اہتمام کرتے ہیں۔ لہٰذا یہ صلاۃ ان لوگوں سے…

Continue Readingكيا نماز عید کو دوسرے دن کے لئے مؤخر کيا جا سكتا هے؟

كيا عورتوں کو عید کی ادائیگی سے روکنا جائز ہے ؟

سوال : کیا مسلمان کے لئے بغیر عذر صلاۃِ عید سے پیچھے رہنا جائز ہے ؟ کیا عورتوں کو مردوں کے ساتھ عید کی ادائیگی سے روکنا جائز ہے ؟ جواب : اکثر اہل علم کے نزدیک صلاۃ عید فرض کفایہ ہے۔ بعض افراد کا اس سے پیچھے رہنا جائز ہے، لیکن آدمی کا اس میں حاضر ہونا اور اپنے مسلمان بھائیوں کے ساتھ شریک ہونا سنتِ مؤکدہ ہے، بغیر عذر شرعی اس کا چھوڑنا مناسب نہیں ہے۔ اور بعض علماء کا مذہب یہ ہے کہ صلاۃ عید، صلاۃ جمعہ کی طرح فرض عین ہے۔ لہٰذا کسی مکلف آزاد مقیم مرد کے لئے اس سے پیچھے رہنا جائز نہیں ہے۔ دلیل کے لحاظ سے یہ قول زیادہ نمایاں ہے۔ عورتوں کے لئے پردہ کے اہتمام اور خوشبو سے اجتناب کے ساتھ صلاۃِ عید میں شریک ہو نا مسنون ہے۔ جیسا کہ صحیحین میں…

Continue Readingكيا عورتوں کو عید کی ادائیگی سے روکنا جائز ہے ؟

عیدین کے کتنے خطبے ہیں؟

ماہنامہ السنہ جہلم جواب: عید کا خطبہ مسنون ہے ، دوسرے خطبے کے بارے میں صراحت سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ سے کچھ ثابت نہیں ۔ البتہ خطبہ جمعہ کی طرح عیدین میں دو خطبے دیے جا سکتے ہیں ۔ اس مسئلہ میں جتنی روایات ہیں ، سب ضعیف ہیں ، مثلاًً: عبید اللہ بن عبداللہ بن عتبہ رحمہ اللہ کہتے ہیں: السُّنْةُ أَن يَخْطُبَ الْإِمَامُ فِى العِيدَيْن خُطبَتَيْن يَفْصِلُ بَيْنَهُمَا بِجُلُوسٍ . ”نبوی طریقہ ہے کہ امام عیدین میں دو خطبے دے اور دونوں کے درمیان کچھ دیر بیٹھے ۔“ [السنن الكبرى للبيهقي: ٢٩٩/٣] تبصرہ ------------------ سند سخت ضعیف ہے ۔ ➊ ابراہیم بن محمد بن ابویحیی اسلمی مدنی جمہور محدثین کے ”ضعیف“ ہے ۔ ➋ مرسل ہے ۔ حافظ نووی رحمہ اللہ (631۔676ھ) لکھتے ہیں: ضعيف ، غير متصل ولم يثبت فى تقرير ذالك شيء والمعتمد فيه…

Continue Readingعیدین کے کتنے خطبے ہیں؟

کیا عیدین کے لیئے آذان یا اقامت ثابت ہے؟

تحریر : ابو ضیاد محمود احمد غضنفر حفظ اللہ وَعَنِ جَابِرِ بْنِ سَمُرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ قَالَ: صَلَّيْتُ مَعَ رَسُولِ اللَّهِ مَا الْعِيدَيْنِ غَيْرَ مَرَّةٍ وَلَا مَرَّتَيْنِ بِغَيْرِ أَذَانَ، وَلَا إِقَامَةٍ. حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہتے ہیں :”میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ دونوں عیدیں کئی مرتبہ پڑھیں اذان اور اقامت کے بغیر۔ “ تحقیق و تخریج : مسلم : 887 فوائد : ➊ عیدین کے لیے اذان یا اقامت کہنا ثابت نہیں ہے ۔ عیدین کا لفظ عید الفطر اور عید الاضحیٰ پر منطبق ہوتا ہے ۔ دونوں عیدیں بار بار لوٹ کر آتی ہیں اس لیے ”عیدین“ کہا گیا ہے ۔ ➋ اسلام نے جہاں بھی تذکر ہ کیا ہے وہاں عیدین کا لفظ بولا ہے جن میں تمام تر مسلمان اکٹھے ہو کر سر بسجو د باید التجا دراز کرتے…

Continue Readingکیا عیدین کے لیئے آذان یا اقامت ثابت ہے؟

لیلۃ القدر کی تلاش و علامات

تحریر: الشیخ مبشر احمد ربانی حفظ اللہ سوال : لیلۃ القدر کسی خاص رات میں واقع ہوتی ہے یا پورے عشرے میں کسی بھی رات؟ مہربانی فرما کر جواب سے مطلع فرما دیں۔ جواب : سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : «تحروا ليلة القدر فى الوتر من العشر الاواخر من رمضان» [بخاري، كتاب فضل ليلة القدر : باب تحري ليلة القدر فى الوتر من العشر الاواخر] ”شبِ قدر رمضان المبارک کے آخری عشرے کی طاق راتوں میں تلاش کرو۔“ اس حدیث سے معلوم ہوا کہ شبِ قدر رمضان المبارک کے آخری عشرے کی طاق راتوں میں ہوتی ہے، ان میں سے کوئی خاص رات متعین نہیں۔ یہ بعض دفعہ اکیسویں رات کو بھی پائی گئی ہے۔ [مسلم 1167] اور بعض دفعہ ستائیسویں رات کو بھی۔ [مسلم 762] لیلۃ القدر کی علامات…

Continue Readingلیلۃ القدر کی تلاش و علامات

اعتکاف نیت، داخلے کا وقت، جائز و ممنوع امور

تحریر: الشیخ مبشر احمد ربانی حفظ اللہ اعتکاف کے لیے نیت سوال : کیا دیگر اعمال کی طرح اعتکاف کے لیے بھی نیت کرنا ضروری ہے؟ جواب : چونکہ اعتکاف عبادت ہے اس لیے اس کے لیے بھی نیت ضروری ہے کیونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہر عبادت کے لیے نیت کو لازمی قرار دیا ہے۔ سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : « اِنَّمَا الْأَعْمَالُ بِالنِّيَّاتِ» [بخاري، كتاب بدء الوحي : باب كيف كان بدء الوحي إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم 1] ”تمام اعمال کا دار ومدار نیتوں پر ہے۔“ لیکن یہ یاد رہے کہ اس کے لیے زبان سے کوئی تلفظ ثابت نہیں۔ یہ دل کا فعل ہے۔ بعض لوگوں نے مسجد میں داخل ہو کر اعتکاف کے لیے : «نَوَيْتُ سُنَّةَ الْاِعْتِكَافِ»…

Continue Readingاعتکاف نیت، داخلے کا وقت، جائز و ممنوع امور

شب قدر کا قیام

  تحریر : فضیلۃ الشیخ حافظ عبدالستار الحماد حفظ اللہ مَنْ قَامَ لَيْلَةَ الْقَدْرِ إِيمَانًا وَاحْتِسَابًا غُفِرَ لَهُ مَا تَقَدَّمَ مِنْ ذَنْبِهِ ” جو شخص ایمان کے ساتھ، طلب ثواب کی نیت سے شب قدر کا قیام کرے گا۔ اس کے سابقہ گناہ معاف کر دیئے جائیں گے۔ “ [صحيح البخاري/كِتَاب فَضْلِ لَيْلَةِ الْقَدْرِ: 2014] فوائد : شب قدر اللہ تعالیٰ کی طرف سے بہت بڑی نعمت ہے۔ اس رات عبادت کرنا ہزار مہینوں کی عبادت سے بڑھ ک رہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے : ”لیلۃ القدر ہزار مہینوں سے بہتر ہے۔“ [القدر : 3 ] رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس رات کے متعلق پہلے بتا دیا گیا تھا۔ لیکن اللہ کی مشیت سے بعد میں اس کا تعین محو ہو گیا۔ اس کا سبب بھی احادیث میں بیان ہوا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے صحابہ…

Continue Readingشب قدر کا قیام

فطرانہ کی ادائیگی

  تحریر : فضیلۃ الشیخ حافظ عبدالستار الحماد حفظ اللہ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَمَرَ بِزَكَاةِ الْفِطْرِ قَبْلَ خُرُوجِ النَّاسِ إِلَى الصَّلَاةِ ” رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حکم دیا کہ فطرانہ، نماز عید سے پہلے ادا کیا جائے۔“ [صحيح البخاري/كِتَاب الزَّكَاة: 1509] فوائد : صدقہ فطر، مسلمانوں کے ہر فرد پر فرض ہے خواہ وہ روزے رکھتا ہو یا نہ رکھتا ہو۔ اس با ت کی صراحت احادیث میں موجود ہے۔ [صحيح البخاري/كِتَاب الزَّكَاة: 1503] اس کی مقدار ایک صاع ہے۔ [صحيح البخاري/كِتَاب الزَّكَاة: 1505] ہمارے ہاں اعشاری نظام کے مطابق ایک صاع دو کلو، سو گرام کا ہوتا ہے۔ یہ عید کے دن، نماز عید سے پہلے ادا کرنا چاہئے۔ چنانچہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے۔ ”جس نے صدقہ فطر نماز سے پہلے ادا کیا تو یہ صدقہ قبول ہو گا اور…

Continue Readingفطرانہ کی ادائیگی

عيد الفطر کے احکام و آداب

عبید اللہ طاہر حفظ اللہ عید الفطر اور عید الاضحی مسلمانوں کی عید ہیں ❀ « عن عائشة رضي الله عنها، قالت: دخل ابوبكر وعندي جاريتان من جواري الانصار تغنيان بما تقاولت الانصار يوم بعاث، قالت: وليستا بمغنيتين، فقال ابوبكر: امزامير الشيطان فى بيت رسول الله صلى الله عليه وسلم وذلك فى يوم عيد، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم:" يا ابا بكر إن لكل قوم عيدا وهذا عيدنا".» حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ آئے، اور میرے پاس انصار کی دو لڑکیاں جنگ بعاث کے دن کا شعر گا رہی تھیں، اور ان لڑکیوں کا پیشہ گانے کا نہیں تھا، تو حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے فرمایا: اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر میں یہ شیطانی باجا؟ اور وہ عید کا دن تھا، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم…

Continue Readingعيد الفطر کے احکام و آداب

صدقہ فطر نکالنے کا صحیح وقت اور اسکی فرضیت

عبید اللہ طاہر حفظ اللہ صدقہ فطر کی فرضیت ❀ «عن عبد الله بن عمر رضي الله عنهما : أن رسول الله صلى الله عليه وسلم فرض زكاة الفطر صاعا من تمر، أو صاعا من شعير، على كل أو عبد، ذكر أو أنثى من المسلمين. » حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے صدقہ فطر کو ہر مسلمان آزاد و غلام اور مرد و عورت پر فرض کیا، جو ایک صاع کھجور یا ایک صاع جَو ہے۔ [صحيح بخاري 1504، صحيح مسلم 983] ❀ «عن قيس بن سعد رضى الله عنه، قال: أنا رسول الله صلى الله عليه وسلم بصدقة الفطر قبل أن تنزل الزكاة، فلما نزلت الزكاة لم يأمرنا ولم ينهنا ونحن نفعله . » حضرت قیس بن سعد رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ…

Continue Readingصدقہ فطر نکالنے کا صحیح وقت اور اسکی فرضیت

اعتکاف

عبید اللہ طاہر حفظ اللہ اللہ تعالی کا ارشاد ہے : ✿ «وَلَا تُبَاشِرُوهُنَّ وَأَنتُمْ عَاكِفُونَ فِي الْمَسَاجِدِ» [البقرة: 187] ”اور جب تم مسجدوں میں معتکف ہو تو بیویوں سے مباشرت نہ کرو۔“ اس سے یہ معلوم ہوا کہ اعتکاف مسجد ہی میں کیا جا سکتا ہے۔ اعتکاف کسی بھی مسجد میں کیا جا سکتا ہے، البتہ ایسی مسجد میں اعتکاف کرنا بہتر ہے جہاں جمعہ اور جماعت کے ساتھ نماز قائم ہوتی ہو تاکہ بار بار وہاں سے نکلنا نہ پڑے۔ اعتکاف کرنے والے کے لیے مستحب ہے کہ وہ نفلی عبادتوں میں لگا رہے، اپنے آپ کو نماز، تلاوت قرآن، حمد، تسبیح، تکبیر، استغفار، اذکار، درود و سلام اور دعاؤں میں مشغول رکھے۔ اسی طرح علمی کتابوں کا مطالعہ، تفسیر و حدیث اور فقہ کی کتابوں کا مذاکره، انبیاء اور نیک لوگوں کی سیرتوں کا مطالعہ بھی کر سکتا ہے۔ اور…

Continue Readingاعتکاف

شب قدر اور آخری عشره

عبید اللہ طاہر حفظ اللہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ✿ « إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةِ الْقَدْرِ ‎ ﴿١﴾ ‏ وَمَا أَدْرَاكَ مَا لَيْلَةُ الْقَدْرِ ‎ ﴿٢﴾ ‏ لَيْلَةُ الْقَدْرِ خَيْرٌ مِّنْ أَلْفِ شَهْرٍ ‎ ﴿٣﴾ ‏ تَنَزَّلُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ فِيهَا بِإِذْنِ رَبِّهِم مِّن كُلِّ أَمْرٍ ‎ ﴿٤﴾ ‏ سَلَامٌ هِيَ حَتَّىٰ مَطْلَعِ الْفَجْرِ ‎ ﴿٥﴾ ‏ » [القدر: 1-5] ہم نے اس (قرآن) کو شب قدر میں نازل کیا ہے۔ اور تم کیا جانو کہ شب قدر کیا ہے؟ شب قدر ہزار مہینوں سے زیادہ بہتر ہے۔ فرشتے اور جبریل اس میں اپنے رب کی اجازت سے ہر حکم لے کر اترتے ہیں۔ وہ رات سراسر سلامتی ہے طلوع فجر تک۔“ ایک دوسری جگہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ✿ «حم ‎ ﴿١﴾ ‏ وَالْكِتَابِ الْمُبِينِ ‎ ﴿٢﴾ ‏ إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةٍ مُّبَارَكَةٍ ۚ إِنَّا كُنَّا مُنذِرِينَ ‎ ﴿٣﴾ ‏ فِيهَا يُفْرَقُ…

Continue Readingشب قدر اور آخری عشره

End of content

No more pages to load