برسی منانا کیسا ہے؟

شماررہ السنہ جہلم جواب: برسی منانا بدعت اور قبیح فعل ہے ۔ برسی کے موقع پر بے شمار بدعات وخرافات کا ارتکاب کیا جاتا ہے ۔ نیز یہ عمل شرعاً بے اصل ہے ۔ اللہ کا فرمان ہے: ﴿أمْ لَهُمْ شُرَكَاءُ شَرَعُوا لَهُمْ مِنَ الدِّينِ مَا لَمْ يَأْذَن بِهِ اللهُ وَلَوْ لَا كَلِمَةُ الفَصْلِ لَقُضِيَ بَيْنَهُمْ وَإِنَّ الظَّالِمِينَ لَهُمْ عَذَابٌ أَلِيمٌ﴾ [الشورى: ٢۱] ”کیا ان کے ایسے شریک ہیں ، جو انہیں شریعت گھڑ کر دیتے ہیں ، جس کی اللہ تعالیٰ نے اجازت نہیں دی ۔ فیصلہ کی بات نہ ہوتی ، تو ان کا کام تمام کر دیا جاتا ، نیز ظالموں کے لیے درد ناک عذاب ہے ۔ “ یہ لوگوں کا گھڑا ہوا دین ہے ۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی مخالفت میں یہ سب کچھ کیا جاتا ہے ۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا…

Continue Readingبرسی منانا کیسا ہے؟

ایسے سپورٹس ڈریس (کھیلوں کے کپڑے) در آمد کرنا جن پر کافروں کے شعار اور علامتیں ہوں

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 500- ایسے سپورٹس ڈریس (کھیلوں کے کپڑے) در آمد کرنا جن پر کافروں کے شعار اور علامتیں ہوں وہ کپڑے جن پر کافروں کے شعار ہوتے ہیں ان کی کچھ تفصیل ہے جو درج ذیل ہے: (1) اگر یہ شعار کافروں کے دینی ر موز ہوں جیسے صلیب وغیرہ تو ایسی حالت میں ان کپڑوں کی درآمد جائز ہے نہ خرید و فروخت ہی۔ (2) اگر یہ شعار اور علامت کسی کافر کی تعظیم کا رمز ہو، مثلاً اس کی تصویر چھپی ہو یا اس کا نام لکھا ہو یا اس طرح کی کوئی بھی چیز تو یہ بھی پہلے کی طرح حرام ہیں۔ (3) اگر یہ علامتیں کسی عبادت کا رمز ہوں نہ کسی شخص کی تعظیم، بلکہ جائز تجارتی نشانات ہوں جنھیں ٹریڈ مارکس کہا جاتا ہے تو ان میں کوئی حرج…

Continue Readingایسے سپورٹس ڈریس (کھیلوں کے کپڑے) در آمد کرنا جن پر کافروں کے شعار اور علامتیں ہوں

زمانہ جاہلیت کی شاعری پڑھانا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 499- زمانہ جاہلیت کی شاعری پڑھانا عربی ادب کی تدریس جائز کاموں میں شمار ہوتی ہے، اس کی اجرت لینا جائز ہے، جب تک نصاب تعلیم فسق و فجور قبیح کلام اور اسلامی قوانین کے خلاف بغاوت اور خروج پر مشتمل نہ ہو۔ [اللجنة الدائمة: 20153]

Continue Readingزمانہ جاہلیت کی شاعری پڑھانا

گانا بجانا بطور پیشہ اپنانا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 498- گانا بجانا بطور پیشہ اپنانا مسلمان پر لازم ہے کہ وہ اپنی کمائی میں شرعی طریقے اپنائے، تاکہ اس کی کمائی پاک اور روزی حلال ہو، پھر اپنی ذات، اولاد اور زیر کفالت افراد پر حلال کمائی سے خرچ کرے، ایسا کرنے سے اللہ تعالیٰ اس کے لیے اجر لکھتے ہیں، اس کی ذات، مال اور زیر کفالت افراد میں برکت ڈالتے ہیں۔ لہٰذا مسلمان کے لیے گانا گانا اور موسیقی کے آلات طرب و نشاط بطور پیشہ بجانا حرام ہے کہ اس کی کمائی پر وہ خود بھی زندگی گزارے اور اس کے زیر کفالت افراد بھی اور پھر فقرا اور اچھائی کے کاموں میں بھی اسی سے خرچ کرے۔ اللہ تعالیٰ پاک ہے اور پاک کے سوا کچھ قبول نہیں کرتا۔ یہ کام اللہ کے غضب کو دعوت دیتا ہے، اس…

Continue Readingگانا بجانا بطور پیشہ اپنانا

سینما بنانا اور اس کا انتظام سنبھالنا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 497- سینما بنانا اور اس کا انتظام سنبھالنا مسلمان کے لیے سینما بنانا ناجائز ہے، اور نہ اپنے لیے نہ کسی دوسرے کے لیے اس کا انتظام سنبھالنا ہی حلال ہے، کیونکہ یہ حرام لہو پر مشتمل ہے، نیز دنیا بھر کے سینما گھروں کے متعلق یہ ایک معروف بات ہے کہ ان میں حیا باختہ تصویریں اور فتنہ انگیز مناظر پیش کیے جاتے ہیں جو بے حیائی اور اخلاقی بگاڑ کی دعوت دیتے، جنسی جذبات بھڑکاتے ہیں اور پھر ان میں اکثر غیر محرم مردوں اور عورتوں کا اختلاط بھی ہوتا ہے۔ [اللجنة الدائمة: 3501]

Continue Readingسینما بنانا اور اس کا انتظام سنبھالنا

اداکاری کا پیشہ اختیار کرنا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 496- اداکاری کا پیشہ اختیار کرنا اداکاری کے پیشے سے وابستہ ہونا تمہارے لیے جائز نہیں، کیونکہ اگر مخصوص افراد کی نقل کی جائے تو ان کی تنقیص ہوتی ہے، نیز یہ پیشہ مذاق اور کھیل تماشے پر مشتمل ہوتا ہے جو مسلمان کے لائق نہیں، لہٰذا ہم تجھے یہ پیشہ ترک کرنے۔ اور اس کے علاوہ کسی دوسری جگہ رزق طلب کرنے کی نصیحت کرتے ہیں۔ جو شخص اللہ تعالیٰ کے لیے کوئی چیز ترک کر دیتا ہے تو اللہ تعالیٰ اس کو اس کا بہتر عوض دیتا ہے: «وَمَن يَتَّقِ اللَّهَ يَجْعَل لَّهُ مَخْرَجًا ‎ ﴿٢﴾ ‏ وَيَرْزُقْهُ مِنْ حَيْثُ لَا يَحْتَسِبُ» [الطلاق: 3,2] ”جو اللہ سے ڈرے گا وہ اس کے لیے نکلنے کا کوئی راستہ بنا دے گا۔ اور اسے رزق دے گا جہاں سے وہ گمان نہیں کرتا۔“ [اللجنة…

Continue Readingاداکاری کا پیشہ اختیار کرنا

آلات لہو رکھنا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 495- آلات لہو رکھنا موسیقی ڈھول وغیرہ جیسے آلات لہو رکھنا جائز ہے نہ ایسی کیسٹیں جمع کرنا جن میں طرب انگیز گانے ریکارڈ ہوں اور نہ ان اشیا کی خرید و فروخت ہی جائز ہے، کیونکہ ان اشیا کے رکھنے میں گناہ اور زیادتی میں تعاون ہے اور ان کی قیمت کھانا بھی جائز نہیں، کیونکہ جب اللہ تعالیٰ کوئی چیز حرام کرتا ہے تو اس کی قیمت بھی حرام کر دیتا ہے۔ ان اشیا کو ضائع کر دینا چاہیے اور ان سے چھٹکارا پا لینا چاہیے۔ ان اشیا کا شادی وغیرہ کی تقریبات میں استعمال کرنا جائز نہیں کیونکہ اس سے برائی کا اظہار ہوتا ہے۔ [اللجنة الدائمة: 21404]

Continue Readingآلات لہو رکھنا

موسیقی سے شغل کرنا اور اس سے علاج کرنا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 494- موسیقی سے شغل کرنا اور اس سے علاج کرنا موسیقی نشر کر نے اور سننے کے ساتھ اشتغال اور دلچسپی رکھنا حرام ہے، خواہ اس میں گانا ہو یا نہ ہو۔ گانے کے ساتھ تو اس کی مصیبت دو چند ہو جاتی ہے، اور اخلاق اور فطرت فساد کا شکار ہو جاتے ہیں۔ یہ جو ذکر کیا جاتا ہے کہ بعض علما کو اس میں بڑی مہارت حاصل تھی، تو یہ صحیح ہے، لیکن وہ فارابی کی جنس سے تھے، جن کو دین اسلام کا کوئی تجربہ نہیں تھا۔ یہ مسلمانوں کے قائد میں نہ حق میں حجت، نہ یہ مسلمانوں کے علم، عقیدے اور عمل میں امام ہی تھے، جیسے خلفاء راشدین، سعید بن جبیر، حسن بصری، شافعی، احمد، اوزاعی اور ان جیسے اسلامی علم اور اس پر عمل کرنے والے ائمہ…

Continue Readingموسیقی سے شغل کرنا اور اس سے علاج کرنا

حنوط شدہ جانور رکھنے کا حکم

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 493- حنوط شدہ جانور رکھنے کا حکم حنوط شدہ جانور رکھنا منع کردہ تصویر کے حکم میں نہیں، کیونکہ آپ نے وہ چیز رکھی ہے جو اللہ تعالیٰ نے پیدا کی ہے۔ کیا وہ اللہ کی مخلوق نہیں؟ لیکن ایک بات غور طلب ہے کہ اگر یہ جانور ایسا ہے جس کا گوشت کھایا نہیں جاتا تو وہ پلید ہے، اسے رکھنا جائز نہیں، لیکن اگر وہ ایسا جانور ہو جس کا گوشت کھانا حلال ہو لیکن اسلامی طریقے کے مطابق ذبح نہ کیا گیا ہو تو وہ بھی ناپاک ہے اور اسے رکھنا بھی ناجائز ہے، لیکن اگر وہ ایسا جانور ہو جس کا گوشت کھانا حلال ہو اور تم نے اسے اسلامی طریقے کے مطابق ذبح کیا، پھر حنوط کر دیا تو اس میں کوئی حرج نہیں۔ اگر اس کام میں بہت…

Continue Readingحنوط شدہ جانور رکھنے کا حکم

ویڈیو بنانے کا حکم

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 492- ویڈیو بنانے کا حکم ویڈیو بنانا بنوانے والے پر منحصر ہے کہ وہ کس چیز کی ویڈیو بنوانا چاہتا ہے۔ آج کل جو لوگ شادی کے دنوں میں محفل نکاح وغیرہ کی مووی بنواتے ہیں، یہ بہت بڑی غلطی اور جرم عظیم ہے کیونکہ اس فلم کو تمام لوگ دیکھیں گے۔ اس میں بے حجاب اور آراستہ خواتین بھی ہوتی ہیں۔ عورتیں ایک دوسری کے ساتھ گفتگو اور ہنسی مذاق بھی کرتی ہیں، جس سے فتنہ پیدا ہوتا ہے جو بلا اشکال حرام ہے۔ بعض اوقات کسی چیز کو بنانے یا تیار کرنے کے لیے یا اس کی ٹریننگ دینے کے لیے سائنسی علمی مواد کی ویڈیو بنائی جاتی ہے، تاہم وہ اہم علمی مواد ہو یا کوئی لیکچر ہو، جس میں گفتگو کرنے والا لوگوں کے ساتھ گفتگو کرتا ہے، ان کو…

Continue Readingویڈیو بنانے کا حکم

تصویروں پر مشتمل اخبارات و رسائل خریدنا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 491- تصویروں پر مشتمل اخبارات و رسائل خریدنا وہ اخبار اور رسائل جن میں اہم خبریں اور مفید علمی مسائل ہوں اور ان میں ذی روح اشیا کی تصویریں بھی ہوں تو انہیں خریدنا اور ان میں موجود مفید علم اور اہم خبروں سے مستفید ہونا جائز ہے، کیونکہ ان میں مقصود علم اور خبریں ہیں تصویریں تابع ہیں، اور حکم اصل مقصود کے تابع ہوتا ہے، تابع کے ساتھ نہیں۔ ان میں موجود تصاویر کسی بھی طریقے سے اچھی طرح مٹا کر یا چھپا کر ان کے خط و خال چھپ جائیں، انہیں نماز گاہ میں رکھنا جائز ہے تاکہ ان میں موجود مضامین سے فائدہ اٹھایا جا سکے۔ [اللجنة الدائمة: 3374]

Continue Readingتصویروں پر مشتمل اخبارات و رسائل خریدنا

بت پرست ممالک سے درآمدہ گوشت کا حکم

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 490- بت پرست ممالک سے درآمدہ گوشت کا حکم اگر گوشت بت پرست یا کیمیونسٹ ممالک سے آئے تو اسے کھانا حلال نہیں، کیونکہ ان کے ذبیحے حرام ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کے لیے اہل کتاب کا، جن سے مراد یہودی اور عیسائی ہیں، کھانا حلال کیا ہے: «الْيَوْمَ أُحِلَّ لَكُمُ الطَّيِّبَاتُ ۖ وَطَعَامُ الَّذِينَ أُوتُوا الْكِتَابَ حِلٌّ لَّكُمْ وَطَعَامُكُمْ حِلٌّ لَّهُمْ» [المائدة: 5] ”آج تمہارے لیے پاکیزہ چیزیں حلال کر دی گئیں اور ان لوگوں کا کھانا تمہارے لیے حلال ہے جنھیں کتاب دی گئی۔“ یہ اس وقت ہے جب مسلمان کو علم نہ ہو کہ یہ غیر اسلامی طریقے کے مطابق ذبح کیا گیا ہے، جیسے: گلا گھونٹ کر مارنا یا بجلی کے جھٹکے سے مارنا وغیرہ۔ اگر اس کا علم ہو جائے تب ان کا ذبیحہ بھی جائز نہیں، کیونکہ…

Continue Readingبت پرست ممالک سے درآمدہ گوشت کا حکم

مسلمان کا ذبیحہ

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 489- مسلمان کا ذبیحہ سوال: بازاروں میں متداول مسلمانوں کے ذبیجوں کا اور ان جانوروں کا حکم جنھیں وہ خود ذبح کرتے ہیں اور جو گوشت ان کے پاس ذبح شدہ آتا ہے؟ جواب: مسلمان کے متعلق اصل یہ ہے کہ اس کے متعلق ہر معاملے میں خیر کا گمان ہی رکھا جائے، یہاں تک کہ معاملہ اس کے خلاف ظاہر ہو جائے، اس بنا پر ان کے ذبیحے بسم اللہ پڑھنے اور ذبح کی کیفیت کے متعلق شرعی احکام کے موافق ہی ہونے پر محمول کیے جائیں گے، لہٰذا اس کا ذبیحہ کھایا جائے۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہ کی حدیث میں ہے کہ ایک قوم نے کہا: اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ! ایک قوم ہمارے پاس گو شت لے کر آتی ہے اور ہم نہیں جانتے کہ وہ…

Continue Readingمسلمان کا ذبیحہ

کھانے اور دوا میں الکحل سے مرکب سرکہ استعمال کرنا

مؤلف : ڈاکٹر محمد ضیاء الرحمٰن اعظمی رحمہ اللہ 488- کھانے اور دوا میں الکحل سے مرکب سرکہ استعمال کرنا الکحل سے ملا ہوا سرکہ استعمال کرنا ناجائز ہے، کیونکہ اس کی زیادہ مقدار نشہ پیدا کر دیتی ہے۔ نشہ آور الکحل شراب ہے اور اللہ تعالیٰ نے شراب سے بچنے کا حکم دیا ہے، لہٰذا نشہ آور الکحل سے علاج کرنا جائز نہیں، کیونکہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے جب دوا بنانے کے لیے شراب کے متعلق پوچھا گیا۔ [صحيح مسلم 1984/12] تو آپ صلى اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: یہ بیماری ہے دوا نہیں، اور آپ صلى اللہ علیہ وسلم کا قول ہے: ”جس کی زیادہ مقدار نشہ پیدا کر دے اس کا تھوڑی مقدار میں استعمال بھی حرام ہے۔“ [سنن أبى داود، رقم الحديث 3681 سنن الترمذي، رقم الحديث 1865 سنن ابن ماجه، رقم الحديث 3393] [اللجنة الدائمة:…

Continue Readingکھانے اور دوا میں الکحل سے مرکب سرکہ استعمال کرنا

End of content

No more pages to load