مریض کو اکسیجن لگانے سے کیا روزہ ٹوٹ جائے گا

تحریر: الشیخ مبشر احمد ربانی حفظ اللہ آکسیجن اور روزہ سوال : کیا کسی مریض کو جسے سانس کی تکلیف ہو، آکسیجن وغیرہ گیس لگائی جا سکتی ہے جبکہ اسے سانس لینے میں تکلیف محسوس ہوتی ہے، تو کیا اس عمل سے روزہ ٹوٹ جائے گا؟ جواب : آکسیجن یا کوئی اور گیس جو سانس کے مریضوں کو لگائی جاتی ہے، اس سے روزہ نہیں ٹوٹتا، جس کی وجوہ درج ذیل ہیں۔ ➊ یہ ایک ہوا ہے جو سانس کی بحالی کے لیے استعمال ہوتی ہے اور ہوا سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔ ➋ اس گیس یا آکسیجن میں کوئی غذائی مواد یا دوائی نہیں ہوتی جو جسم میں داخل ہو۔ ڈاکٹر محمد علی البار کہتے ہیں : ”ایسی آکسیجن جو سانس کے مریضوں کو لگائی جاتی ہے، اس میں کوئی غذائی مواد یا دوائی نہیں ہوتی اور یہ زیادہ تر سانس کی بحالی…

Continue Readingمریض کو اکسیجن لگانے سے کیا روزہ ٹوٹ جائے گا

ہوائی سفر میں روزہ کس وقت افطار کیا جائے؟

تحریر: الشیخ مبشر احمد ربانی حفظ اللہ ہوائی سفر کرنے والے کا وقت افطار سوال : اگر کوئی روزہ دار سورج غروب ہونے سے ایک گھنٹہ قبل یا اس سے کم وقت میں ہوائی جہاز میں سفر کرتا ہے اور وہ شہر سے دور بھی ہوتا ہے تو اس صورت میں روزہ کس وقت افطار کیا جائے؟ جواب : اگر روزہ دار جہاز میں سورج غروب ہونے سے قبل سوار ہوا ہے تو وہ جہاز میں اس وقت تک افطار نہیں کرے گا جب تک وہ سورج کو غروب ہوتا نہ دیکھ لے یا سورج غروب ہو جائے یا وہ کسی ایسے شہر میں اترے جہاں سورج غروب ہو چکا ہے۔ اس کی دلیل میں عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے مروی حدیث ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : «إذا اقبل الليل من هاهنا، وادبر النهار…

Continue Readingہوائی سفر میں روزہ کس وقت افطار کیا جائے؟

تعویذ باندھنے کا حکم

تحریر: علامہ عبداللہ بن عبدالرحمن الجبرین حفظ اللہ تعویذ باندھنے کا حکم سوال: اس تعویذ کے باندھنے یا استعمال کرنے کا کیا حکم ہے جس کے بارے میں یہ علم ہو کہ یہ قرآنی آیات پر مشتمل ہے؟ جواب: بعض صحابہ کرام جیسے عبد اللہ بن عمرو بن العاص ، عائشہ رضی اللہ عنہم اور دیگر ، حضرات سے منقول ہے کہ تعویذ کا باندھنا یا استعمال کرنا جائز ہے ، بشرطیکہ وہ تعویذ آیات قرآنیہ یا اللہ پاک کے اسماء حسنیٰ پر مشتمل ہوں ، اور جن احادیث میں تعویذ کے استعمال کی ممانعت آئی ہے تو یہ وہ تعویذ ہیں جو شرکیہ کلمات پر مشتمل ہوں ۔ جبکہ دوسرے صحابہ کرام ، جیسے ابنِ عباس ، ابنِ مسعود ، حذیفہ اور ابن حکیم رضی اللہ عنہم ان لوگوں کا کہنا ہے کہ ہر قسم کا تعویذ استعمال ہی نہ کیا جائے…

Continue Readingتعویذ باندھنے کا حکم

جادو گروں اور مداریوں کے پاس جانے کا حکم

  تحریر: علامہ عبداللہ بن عبدالرحمن الجبرین حفظ اللہ جادو گروں اور مداریوں کے پاس جانے کا حکم سوال: معلومات حاصل کرنے یا بیماری و دوا معلوم کرنے کی خاطر جادو گر اور مداری کے پاس جانے کا کیا حکم ہے؟ جواب: یہ نا جائز ہے ۔ اس سے پہلے نجومیوں ، شعبدہ بازوں اور جادو گروں کے پاس جانے کا حکم بیان ہو چکا ہے ۔ نجومی اس شخص کو کہا جاتا ہے جو چوری گم شدہ چیز یا انسان کے دل کے خیال کی خبر دے ۔ وہ اس طرح غیب کے علم کا دعویٰ کرتا ہے ۔ وہ جن یا شیاطین کی اطلاع پر اعتماد کرتا ہے اور پھر وہ جنوں اور شیطانوں کی مرضی کے مطابق چلتا ہے تاکہ جن و شیطان اس کے کام آسکیں ۔ جادو ایک شیطانی عمل ہے جو گانٹھ (گرہ) یا جھاڑ پھونک یا…

Continue Readingجادو گروں اور مداریوں کے پاس جانے کا حکم

میلاد منانے کا حکم

تحریر: علامہ عبداللہ بن عبدالرحمن الجبرین حفظ اللہ میلاد منانے کا حکم سوال: نبی کریم صلى اللہ علیہ وسلم کی پیدائش پر جشن منانے کا کیا حکم ہے؟ جواب: یہ بدعت منکرہ ہے جس کو بنو بویہ نے چوتھی صدی ہجری میں ایجاد کیا تھا اور پھر یہ بدعت رواج پکڑ گئی اور بالآخر اکثر و بیشتر اسلامی ملکوں میں عام ہوگئی ۔ یہاں تک کہ یہ بدعت منکرہ رسم بن گئی اور اکثر اسلامی ملکوں کے علماء نے اسے تسلیم کر لیا ۔ اس بدعت کے بارے میں علماء کی خاموشی اور ان کی مشارکت کو عوام الناس نے اپنے لیے دلیل و حجت بنا لیا ، البتہ اس قبیل کے علماء اہل تحقیق اور اہل السنت والجماعت میں سے نہ تھے ، بلکہ یہ علماء سرکاری مولوی تھے جو حکمرانوں کا قرب چاہتے تھے ، جنہیں دنیا بے حد محبوب تھی…

Continue Readingمیلاد منانے کا حکم

بدعت کی حقیقت

تحریر: علامہ عبداللہ بن عبدالرحمن الجبرین حفظ اللہ بدعت کی حقیقت سوال: نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان: واياكم ومحدثات الأمور ”تم دین میں نئی ایجاد کی ہوئی چیزوں سے بچو“ کا کیا مطلب و مفہوم ہے؟ جواب: مُحدثات سے مراد وہ نئے کام ہیں جن کی نسبت شریعت مطہرہ کی طرف کی جاتی ہے ، حالانکہ وہ شریعتِ اسلامیہ سے نہیں ہوتے کیونکہ اللہ تعالیٰ نے دین اسلام کو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی بعثت کے ساتھ ہی کامل کر دیا ہے ۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے: ﴿الْيَوْمَ أَكْمَلْتُ لَكُمْ دِينَكُمْ وَأَتْمَمْتُ عَلَيْكُمْ نِعْمَتِي . . .﴾ [المائدة: 3] ”آج میں نے تمہارے لیے تمہارے دین کو کامل کر دیا اور تم پر اپنی نعمت تمام کر دی ۔ ۔ ۔ “ سو اب دینِ اسلام کے کامل ہونے کے بعد اس میں اضافہ و زیادتی کی کوئی…

Continue Readingبدعت کی حقیقت

برصغیر میں رائج چند بڑی بدعات پر ایک نظر

تحریر: محمد منیر قمر حفظ اللہ محمدﷺ رسول الله کا مطلب محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا لفظی ترجمہ یہ ہے کہ : ”حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے رسول ہیں ۔“ گویا آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت کے اقرار اور شہادت نے مسلمانوں پر واجب کر دیا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے احکام کی اطاعت اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے منع کردہ امور سے مکمل اجتناب و احتراز کیا جائے ۔ چنانچہ اسی سلسلہ میں ہی ارشاد الہی ہے: ﴿وَمَا آتَاكُمُ الرَّسُولُ فَخُذُوهُ وَمَا نَهَاكُمْ عَنْهُ فَانتَهُوا ﴾ [سورة الحشر: 7 ] ”تمہیں رسول صلی اللہ علیہ وسلم جو حکم دیں اسے اپنا لو اور جس کام سے روکیں اس سے باز آجاؤ ۔“ امور دینیہ میں اپنی مرضی اور من مانی کی بجائے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم…

Continue Readingبرصغیر میں رائج چند بڑی بدعات پر ایک نظر

پکی قبریں بنانا

تحریر: الشیخ مبشر احمد ربانی حفظ اللہ سوال : آج کل پکی قبریں بنانے کا خوب رواج ہے کیا ایسا کرنا شرعی اعتبار سے درست ہے ؟ جواب : پکی قبریں بنانا اسلام میں قطعًا ناجائز ہے اور رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے صریح حکم کے خلاف ہے۔ «نهى رسول الله صلى الله عليه وسلم ان يجصص القبر، وان يقعد عليه، وان يبنى عليه» [مسلم، كتاب الجنائز : باب النهي عن تحصيص القبر 970، ابوداؤد 3225] ”رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پختہ قبریں بنانے اور ان پر بیٹھنے اور عمارت تعمیر کرنے سے منع فرمایا ہے۔“ اس صحیح حدیث سے معلوم ہوا کہ پکی قبریں بنانا اور ان پر عمارت تعمیر کرنا ناجائز و ممنوع ہے۔

Continue Readingپکی قبریں بنانا

رد بدعت تاریخ کے آئینے میں

  تالیف: ابوالمظفر عبدالحکیم عبدالمعبود المدنی حفظ اللہ بدعت کا لغوی معنی بدعت کا اصل اشتقاق عربی زبان میں ابدع ، تبدع ، بديع ، مبدع ومبتدع سے ہے جس کے لغت میں دو معانی ہیں۔ ➊ بلا سابق مثال کے کسی چیز کو بنانا اور ایجاد کرنا اور اسی معنی میں آیت کریمہ ہے: بديع السموات والارض یعنی ”اللہ تعالیٰ آسمان و زمین کو بلاکسی سابق مثال کے پیدا کرنے والا ہے۔ “ [البقره: 117] دوسری آیت میں ہے: قل ماكنت بدعا من الرسل ”کہہ دیجئے کہ میں کوئی نیا رسول نہیں ہوں۔ “ [احقاف: 91] اور اسی سے ہے: و رهبانية ابتدعوها ما كتبناها عليهم ”اور یعنی رہبانیت جس کو ان لوگوں نے بلا کسی سابق مثال کے ایجاد کر لیا ہے ہم نے ان کے اوپر اسے متعین نہیں کیا ہے۔“ [الحديد: 271] ➋ تھکاوٹ اور اکتاہٹ: عربی میں کہا…

Continue Readingرد بدعت تاریخ کے آئینے میں

جنازہ قبر اور تعزیت کی چند بدعات

تالیف: احمد بن عبداللہ السلمی حفظ اللہ بسم الله الرحمن الرحيم الحمد لله رب العالمين والعاقبة للمتقين والصلاة والسلام على أشرف الأنبياء والمرسلين نبينا محمد وعلى آله وصحبه أجمعين و بعد میرے محترم دینی بھائیو! ہم آپ کی خدمت میں جنازہ اور قبر اورتعزیت کی چند بدعتوں کا ذکر کر رہے ہیں، اس لئے کہ بہت سارے لوگ جہالت اور اندھی تقلید کی وجہ سے ان میں گرفتار ہیں، میں نے مناسب سمجھا کہ ایک دینی بھائی کی حیثیت سے نصیحت کا فریضہ انجام دے دوں، میں نے کوشش کی ہے کہ اس رسالہ میں صرف مشہور بدعتوں کا ذکر کروں۔ ➊ موت سے غافل ہو جانا، موت کو یاد نہ کرنا حالانکہ موت ایک نصیحت ہے۔ ➋ بہت سارے لوگ وصیت لکھنے کا کوئی اہتمام نہیں کرتے ہیں، بلکہ اگر وصیت لکھنا چاہتے ہیں تو لوگ کہتے ہیں ابھی تو موت بہت…

Continue Readingجنازہ قبر اور تعزیت کی چند بدعات

ایصال ثواب جائز اور ناجائزصورتیں

تالیف: حافظ شبیر صدیق حفظ اللہ مشرک والدین اور رشتہ داروں کے لیے ایصال ثواب ......؟ وہ امور جن کی وجہ سے کسی شخص کے فوت ہو جانے کے بعد بھی اس کو ان کا ثواب پہنچتا ہے، ان کے جاننے سے پہلے یہ جاننا بھی اشد ضروری ہے کہ یہ فائدہ صرف اس شخص کو پہنچے گا جو مؤحد ہوگا۔ جس نے اپنی زندگی میں کبھی شرک نہ کیا ہو یا اس سے شرک ایسے گھناونے جرم کا ارتکاب تو ہو گیا ہو مگر اس نے اپنی زندگی ہی میں توبہ کر لی ہو۔ اگر کوئی شخص شرک سے توبہ کیے بغیر فوت ہو جاتا ہے تو اس کو نہ تو اپنے اعمال کچھ فائدہ پہنچائیں گے اور نہ ہی کسی اور کے۔ کسی شخص کے عمل سے اس کو فائدہ پہنچنا تو درکنار، اگر کوئی اس کے حق میں دعائے مغفرت…

Continue Readingایصال ثواب جائز اور ناجائزصورتیں

صحیحین میں بدعتی راوی

تحریر: ابن الحسن المحمدی


ہم راوی کے صدق و عدالت اور حفظ وضبط کو دیکھتے ہیں۔ اس کا بدعتی، مثلاً مرجی، ناصبی، قدری، معتزلی، شیعی وغیرہ ہونا مصر نہیں ہوتا۔ صحیح قول کے مطابق کسی عادل و ضابط بدعتی راوی کا داعی الی البدعہ ہونا بھی مضر نہیں ہوتا اور اس کی وہ روایت بھی قابل قبول ہوتی ہے جو ظاہراً اس کی بدعت کو تقویت دے رہی ہو۔ 

بدعت کی اقسام : 
حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے بدعت کی دو قسمیں بیان کی ہیں : 
(1) بدعت صغریٰ، (2) بدعت کبریٰ 
بدعت صغریٰ کی مثال انہوں نے تشیع سے دی ہے جبکہ بدعت کبریٰ کی مثال کامل رفض اور اس میں غلو سے دی ہے۔ 
(ميزان الاعتدال : 5/1، 6) 

انہوں نے ابان بن تغلب راوی کے بارے میں لکھا ہے : 
 شيعي جلد، لكنه صدوق، فلنا صدقه، وعليه بدعته . 
’’ یہ کٹر شیعہ لیکن سچا تھا۔ ہمیں اس کی سچائی سے سروکار ہے۔ اس کی بدعت کا وبال اسی پر ہو گا۔ “ (ميزان الاعتدال : 5/1) 

(more…)

Continue Readingصحیحین میں بدعتی راوی

قیام میلاد کی شرعی حیثیت

تحریر غلام مصطفٰے ظہیر امن پوری

محفلِ میلاد وغیرہ میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذکر خیر پر کھڑے ہو جانا بے اصل اور بے ثبوت عمل ہے، جس کی بنیاد محض نفسانی خواہشات اور غلو پر ہے۔ شرعی احکام، قرآن و حدیث اور اجماع امت سے فہمِ سلف کی روشنی میں ثابت ہوتے ہیں۔ ان مصادر میں سے کسی میں بھی اس کا ثبوت نہیں، لہٰذا یہ کام بدعت ہے۔

 

بعض لوگوں کا کہنا ہے کہ نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم خود اس محفل میں تشریف فرما ہوتے ہیں، بعض کہتے ہیں : ”تاہم یہ بات ممکنات میں سے ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم روحانی طور پر محفلِ میلاد میں تشریف لائیں۔“ بعض نے کہا ہے : ”ایسا ہونا گو بصورتِ معجزہ ممکن ہے۔“ وغیرہ۔

 

یہ سب ان لوگوں کے اپنے منہ کی باتیں ہیں۔ قرآن و سنت میں اس کی کوئی اصل نہیں۔ جاہل صوفیوں میں سے جن کا یہ دعویٰ ہے کہ وہ بیداری کی حالت میں نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھتے ہیں یا نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم محفل میلاد میں حاضر ہوتے ہیں یا اس سے کوئی ملتی جلتی بات کرتے ہیں، وہ قبیح ترین غلط بات کہتے ہیں، بدترین تلبیسی پردہ اس پر چڑھاتے ہیں، بہت بڑی غلطی میں مبتلا ہیں اور کتاب و سنت اور اہلِ علم کے اجماع کی مخالفت کرتے ہیں، کیونکہ مردے تو روز قیامت ہی اپنے قبروں سے نکالے جائیں گے، دنیا میں نہیں، جیسا کہ فرمان باری تعالیٰ ہے :
﴿ثُمَّ إِنَّكُم بَعْدَ ذَٰلِكَ لَمَيِّتُونَ ۝ ثُمَّ إِنَّكُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ تُبْعَثُونَ﴾ (المؤمنون : ۱۵-۱۶)
”پھر تم اس کے بعد ضرور مرنے والے ہو، پھر تم روزِ قیامت زندہ کیئے جاؤ گے۔“

 

اللہ تعالیٰ نے خبر دی ہے کہ مردے روز قیامت ہی زندہ ہوں گے، دنیا میں نہیں۔ جو اس کے خلاف کہتا ہے وہ سفید جھوٹ بولتا ہے ملمع سازی سے غلط بات سناتا ہے۔ وہ اس حق کو نہیں پہچان پایا جسے سلف صالحین نے پہچانا تھا اور جس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اور تابعین عظام رحمہ اللہ علیہم چلتے رہے۔

(more…)

Continue Readingقیام میلاد کی شرعی حیثیت

نماز غوثیہ

 تحریر: ابو سعید سلفی 

بعض لوگوں نے دین میں مداخلت کرتے ہوئے ایک نئی نماز گھڑی ہے اور اسے ’’ نماز غوثیہ “ کا نام دے کر شیخ عبدالقادر جیلانی رحمہ اللہ کی طرف منسوب کر دیا ہے۔ یہ نماز بدعات و خرافات اور شرک و کفر کا ملغوبہ ہے۔ دین نبی اکرم کے اقوال و افعال کی پیروی کا نام ہے۔ غیر مشروع طریقوں سے تقرب الٰہی کا حصول ناممکن ہے۔ اگرچہ یہ لوگ اپنے ان کارناموں کو اچھا خیال کرتے ہیں، لیکن حقیقت یہ ہے کہ ایسے طریقوں کو دین و عبادت قرار دینا فساد فی الارض ہے۔ فرمانِ باری تعالیٰ ہے :

 ﴿وَإِذَا قِيلَ لَهُمْ لَا تُفْسِدُوا فِي الْأَرْضِ قَالُوا إِنَّمَا نَحْنُ مُصْلِحُونَ﴾ (البقره:12،11)

 ’’ جب ان سے کہا جاتا ہے کہ تم زمین میں فساد نہ کرو تو وہ کہتے ہیں : بلاشبہ ہم تو اصلاح کرنے والے ہیں۔ خبردار ! حقیقت میں یہی لوگ فسادی ہیں، لیکن انہیں شعور نہیں۔ “ 

 

بدعات، اللہ کی زمین پر فساد و فتنہ کا باعث ہیں۔ بعض لوگ آئے دن کوئی نہ کوئی بدعت ایجاد کر لیتے ہیں۔ وہ عبادات میں نبی اکرم کی ذات گرامی پر اکتفا نہیں کرتے۔ 

(more…)

Continue Readingنماز غوثیہ

End of content

No more pages to load